June 2012|جون 2012
 
   

یہ شعر کیازِ چھہ میہ پسند


منیب الرحمن

 

تژھ تٍر یواں ٲس زِ رتھ شٹھہے رگن منز
اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس ہتٮن دارِ مٔرم راتھ

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ زبان زد عام شعر۔

سیٹھا کم شعر چھہِ زبان زد عام گژھان۔ اکثر چھہِ امہ مۅکھہ یاد تھاونہ یوان یا روزان زِ تم چھہ اکس بییس موقعس پیٹھ بکار یوان۔ زبان زد عام گژھنک وجہ چھہ عموما شعری حسن کم تہ اکار بکار ینچ قابلیت زیادہ آسان۔ مثلا یہ شعر۔

یاد ماضی عذاب ہے یارب
چھین لے مجھ سے حافظہ میرا

یہ شعر چھہ ضرب المثل بنیومت تکیازِ اتھ منز چھہ انسانی تجربک اکھ تیتھ پزر موجود یس اکثر اوقاتن پیٹھ سانہِ احساسچ ترجمانی کران چھہ۔مگر اتھ منز چھہ نہ خیالہ کہ ورتاوہ علاوہ بییہ کانہہ شعری حسن یا خوبی۔ خیالن ولگیتُن دین چھہ نہ یکسر شعری عملہِ نیبر تکیازِ امہ سٍتۍ چھہ کُنہِ معمولی خیالس منز کانہہ غیرمعمولی یا بالکل نوٚو پہلو نیران یمہ کنۍ پرن والۍ سندس ذہنس منز تعجب، سوال، تجسس، تحیر ، بیترِ ہوۍ جذبہ پیدہ گژھان چھہِ۔ پیٹھمس شعرس منز چھہ سوال پیدہ گژھان زِ یہ شخص کیازِ چھہ پتھ کال چہ ژٮتہ آوری سٍتۍ یوت پریشان؟ اتھ شعرس چھہِ واریاہ معنی ممکن۔ متکلم سند تکلیف چھہ یا تہ اوہ مۅکھہ زِ تسند پتھ کال چھہ تسندس ازکالس برعکس (1) سیٹھا مارۍ موٚند اوسمت، نتہ چھہ (2) سیٹھا تکلیف دہ اوسمت یس نہ تس ونیک تام مشان چھہ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ عذاب، یارب تہ حافظہ ہوۍ لفظ معنی چہ باریکی منز اضافہ کران۔ شعرس منز یتھہ پاٹھۍ اکہ کھۅتہ زیادہ (تہ بعضےمتضاد) معنی پیدہ کرنۍ تہِ چھہ اکس حدس تام شعری حسن ماننہ یوان۔ امہ خیال آرایی تہ کارآمدی ورٲے چھہ نہ اتھ شعرس منز بییہ کانہہ زبردست شعری حسن۔ اتھ مقابلہ چھہ مظفر عازم سند شعر محسوساتن ہند دنیا سٲنس ذہنس منز آباد کران۔

عازم سندس شعرس منز تہِ چھہ اردو شعرس رلوُن مگر برعکس خیال ۔ اظہار تہِ چھہ نہ اردو شعرکۍ پاٹھۍ سیدِ سیوٚد بلکہ چھہ اکھ منظر اچھن برونہہ کنہِ واقع سپدان تہ تٍرِ ہند تہِ چھہ کم کاسہ احساس گژھان۔ شعرس منز چھہ لغوی تہ استعاراتی معنین ہند سنگم۔لغوی سطحس پیٹھ چھیہ شعرس منز وندہ کالچ تہ ناداری یا غفلتچ عکاسی۔کریٹھ راتھ۔ دارِ گوٚل یلہ۔ تٍر۔ اخبار کاغذ تہِ نہ موجود۔ مجبوری۔ یہ چھہ اکھ عام ، ممکن تہ سطحی صورت حال۔چٹھۍ نہ بلکہ اخبار چھہ میہ تہِ پننہِ گرہ چٮن دارٮن لگاوۍ متۍ۔ اتھ منز چھہ وۅنۍ ناسٹالجیا۔ استعاراتی سطحس پیٹھ چھہ یمنے عام چیزن منز علاوہ (تہ الگ) معنیچ دریافت سپدان۔ استعاراتی معنی چھہ نہ لغوی معنی یکۍ پاٹھۍ مقرر آسان۔ لہذا ہیکو اسۍ تٍرِ، دار، چٹھہِ واریاہ معنوی تعبیر کٔرتھ۔ یعنی تٍر ہیکہ اتھ شعرس منز نامساعد حالات یا اشکال تہِ، دٲر ہیکہ نظریہ یا زندگی ہند کانہہ تجربہ تہِ ٲستھ۔

شعرہ کٮن لفظن ییلہ اکہ اکہ سنان چھس، معنی چہ کٲژٲ باریکی چھیہ برونہہ کُن بوان۔ "اکھ پرانۍ چٹھیا" یا "دارِ مٔرم راتھ" یم لفظ کوتاہ چھہ باوان۔ مثلا اکھ: کُنی، غیر معین۔پرانۍ: مشراونہ آمژ، شاید وقت بدلنس سٍتۍ بے مصرف، یا مۅلج ۔ چٹھیا: اکے، کتھہ تام پاٹھۍ پتھ کن روزمژ، اکھ بلا تعین خط۔ ٲس: پانے ٲس، شاید پٮتھ، رژھراونہ ٲس نہ آمژ ، عدم دلچسپی۔ مٔرم: تکلیف دہ عمل، ناقدری، احساسہ روٚس۔ راتھ: مشکل وق، لاتعلقی۔