June 2012|جون 2012
 

ہمعصر افسانہ: موضوعی تہ ہیتی تجربہ


شفیع شوق

 


اختر محی الدین تہ ہری کرشن کول نہ وفاتہ پتہ چھہ از برونہہ وُہ ؤری افسانہ پرون ، تہ پتمٮن وُہن ؤرین ہندس تاریخی پس منظرس منز لیکھنہ آمتۍافسانہ معاصر باسان۔اژھٮن زمانہ چھہ امی اندازہ کینژن واقعہن ہندِ حوالہ تاریخ بنان آمت۔ نتہ چھہِ از تہِ پتمٮن ستتھن ؤرین ہندۍکینہہ افسانہ نگار تہِ موجود تہ پرن والۍ تہِ۔ میون یہ گفتگو چھہ لہٰذا برابر1950 ٔ پٮٹھہ لیکھنہ آمت افسانہ پنن موضوع زانن بہتر زانان۔

کُنہِ ادبی صنفس منز تجربک فہم تہ ادراک چھہ تیلی ممکن ییلہِ اسِہ امہ کہِ روایتک وقوف آسِہ۔ اوہ کِنۍ چھہ ضروری زِ تجربن ہنز کتھ کرنہ برونہہ وچھو اسۍ زِ افسانچ روایت کیاہ چھٮہ۔

عالمی سطحس پٮٹھ تسلیم کرنہ آمتٮن افسانہ نگارن ہندِ فنہ کہ حوالہ چھہ افسانہ اکہ جدید ادبی صنفہ کِہ مفہومہ یتھ روایتس پٮٹھ قایم زِ یہ چھہ حقیقی انسانہ سنزِزندگی نسبت کنہِ مخصوص مختصر واقعہچ تِژھ لسانی ترجمانی زِ پرن وول ہیکہِ واقعہک بصری وقوف حاصل کرِتھ؛ امیک حاصل آسِہ تفریح ، یا آگہی تہ اکثر دۅنوے۔ واقعہ کِس انتخابس منز تہ امچہ پیشکاری منز چھٮہ لیکھن والۍ سنز شخصیت لازماً شامل ۔ چونکہ لیکھن والۍ سنز شخصیت چھٮہ مخصوص زمانہ کہ کلہم مزازکہ حوالہ تہ تسندِ قومہ کہ تمدنہ کہ حوالہ مرتب سپدان، افسانس منز چھہ زمانہ تہ تمدن بے شونکۍ پاٹھۍ امہ کٮن ترکیبی جُزن تہ جُزیاتن منز وۅتلان تہ لہٰذا چھہ افسانس منز زمانہ مکانک حال ناگزیر۔ امہ روایتہ سفر کٔرِتھ چھہ افسانہ ساسہ بدٮن ؤرِین دوران دلیلو، داستانو، قصو تہ حکایتو نشہِ الگ سپدِتھ ادبک اکھ مصدقہ صنف بنتھ قایم سپدیومت۔افسانک یہ مفہوم مد نظر تھٔوتھ چھٮہ افسانس تہ باقی بیانیہ ادبس درمیان بنیادی فرق یی زِ ییتہِ پرٲنِس بیانیہ ادبس منز واقعہ تہ اتھ منز آورۍ کردار قدرن ہندۍ ناو ٲسۍ، افسانس منز چھِہ واقعہ تہ کردار زمانہ کہ وسیلہ وجود پراوان۔ تہ زمانہ چھہ واقعہن تہ کردارن اندۍپکھۍ امہ ییمہِ چیزن ہند تالیف تہ چیزن درمیان رشتن ہند ناو۔چیزن ہند تالیف تہ تمن درمیان رشتہ چھہِ تتھ اہمیژ تابین ےۅسہ افسانہ نگارس مد نظر تجربس منز درینٹھۍ آسِہ آمژ۔ فضا ساز جُزیاتن منز گژھِہ نہ منظر کشی یا صوتی موسیقی ہند مقصد آسُن۔

افسانکۍ یم حد تسلیم کٔرِتھ تہ حدن منز روزِتھ زیادہ کھۅتہ زیادہ آزادی تلاش کٔرِتھ گوٚو کاشرس منز افسانہ وُہمہِ صدی ہندس شیمس دہلس منز شدو مدہ سان شروع تہ شروع گژھان گژھانے لگۍ سانۍ افسانہ نگار تجربن ہندِ ندرتہ مطابق روایت نشہِ گریزکرنکۍ تجربہ کرنہِ۔

ترجمانی چھٮہ افسانچ بنیادی روایت تہ اتھ منزاوس گۅڈنیکے تجربہ افسانک ہر کانہہ جُز سیاسی تصورکس خدمتس منز آیتن تھاوُن نہ زِ افسانہ گوٚژھ سُہ کونچھمت سیاسی تصور تجویز کرُن۔

تعجلی چھٮہ ۔ کٲم گژھِہ اند نۍ ۔ بہ تہِ گژھہ آزاد۔ ژو نگ سۅ تہِ نہ ادہ تےٖلہِ دادِ۔ انگریز ژو ٚل تہ شین کو نہ گوٚل۔ لالہ چھہ بوٚ ڈ تہ اسۍ کمۍ بنا وۍ لوکۍ۔ لوکۍ تہِ گژھن بڈنۍ۔ منز لِکۍ ما رودۍ منز لی! سُلہ تہِ گژھِہ پانے بوٚڈ۔ ییلہِ زندہ روزِ۔۔۔ ہاہا۔ تمس چھہ زندہ روزنک حق ۔ آزادُ لکھ چھِہ نہ جل جل مران ۔( سوم ناتھ زتشی: ییلہِ پھوٚل گاش))

اتھ تجربس لرِ اوس بیاکھ تجربہ واقعہس منز شامل کردارن ستۍ جذباتی سطحس پٮٹھ وابستگی اظہار ےۅسہ زبانہِ اشارہ آمیز چھٮہ بناوان: ییمہِ دۅہہ زون دیدِ ہچو بندوق ہٮتھ کو رہ کپُرک پوژھ ژھنِتھ تہ ہوٚل گٔنڈِ تھ درایہ تمہِ دۅ ہہ ٲس گامۍ گامس د ہۍ ژھٮتے۔ تمہِ دۅ ہہ اوس نہ کاوہ پورِ شُر تہ نہ اوس کُلٮن پٮٹھ کُنہِ کانہہ کا و ٹاو ٹاو کران ۔ (دیناناتھ نادم: جوابی کارڈ

زمانہ نسبتا واقعہن ہنزِ ترجمانی منز چھہ ایرنی ہند روِیہ درپردہ ڈرامہس خودمختار تہِ بناوان:

کنےُ گرز و ٚو تھ کِبر بیچھہ نہِ وارِ منز۔ زن گٔے اگنہ گگنہ گگراے۔ دورِ آو ذٲلدار سنزِ دارِ پٮٹھ کس تام یہ بوزِتھ اسُن۔ ظاہرا اوہ کنِۍ زِ گر یستٮن کٲژاہ تھٔز کریکھ تہ دٔر اڈِ ج چھٮہ۔ (امین کامل: یا دوستو، گُگو گو‘)

ترجمانی چھٮہ تیلی فن بنان ییلہِ کردار، واقعہ، فضا تہ بیانہ نِشہِ عقیدہ، وابستگی، جذبات تہ فکر الگ کٔرِتھ افسانہ نگار زندگی منز موجود لابُدی غیر یقینیت دریافت ہیکہِ کٔرِتھ۔ اختر محی الدین سند دند وزُن

’’ ادہ اوس سیہِ اپزُے ونان زِ گرس منز ہے گژھِہ نہ دندوزُن آسُن۔ امہِ ستۍ ہے چھہ شکس یوان۔‘‘
اشم ؤژھس ۔’’کِتھہ پاٹھۍ کھییہِ امۍ گُلہ بدماشن یہ پاچہِ لیج!دیتمہ چانہِ بلایہ رتہ چھپہِِ تہ کٹہ کنہِ۔‘‘
شیٹھہ پتہ کس افسانس منز چھٮہ ترجمانی کردارس کُنہِ زمانی تہ مقامی آرس منز أنتھ کردارن ہندس داخلی صورتحالس پیش کران۔یہ عمل ہیکہِ موزن نقطہ نظر اختیار کٔرِتھ ورگہ ورگہ وَلو ستۍ ممکن سپدتھ ۔ بنیادی شرط چھہ پرن وول ہاونہ تہ باونہ آمتس صورتحالس پٮٹھ یقین کرناوُن۔تضاد چھہ امہ باپت گۅڈنیک ملزوم۔ تضاد کردارس بییس یا بیین کردارن ستۍ آسِہ، یاآسیس پننسٕے ذہنس اندر مختلف دِشاین کُن حرکتس منز قدرن، احساسن، تہ جذباتن درمیان۔

’’گو ییتہِ تہِ چھہِ مسلمان! کیاہ آسہ یم برقہ پابند چاندنی چوکہ منزۍ پکان ! یمن تہِ ما آسہِ ییتہِ تتھے پاٹھۍ پھر58ٹھ گژھان یتھہ پاٹھۍ اسِہ چھہ تتہِ گژھان! گۅڈہ مٲرِکھ اسۍ تتہِ تہ زِ یمن مارن ییتہِ! مگر دلہ کس وہمس کیاہ کرۍ زِ!‘‘ (ہری کرشن کول: تاپھ) کردار چھہ بعضے پننہ عملہ ستۍ تعمیر سپدنہ بجایہ کُنہِ کیفیتس منز گیٖرٲستھ پننہِ کلامہ ستۍ تہِ نوٚن نیران۔ لفظ، کتھِہ ہند تُل تراو، تہ لفظوستۍپنن مطلب پسِ اظہار تھاونچہ کوششہ ستۍ چھہِ کرداربرونٹھ کُن یوان۔ ہمہ آگاہ راوی چھہ کردارن کَن دِوان تہ تہند کلام مکالمن منز انان۔ منزۍ منزۍ چھہ افسانہ نگار تہِ راوی سند کردار اختیار کٔرِتھ بیانیہس منز دٲخل سپدان۔ رتن لال شانت سند تہہ در تہہ بتراتھ افسانہ:

ژہ چھکھ سا اتھ سنیومت زانہہ؟ یہ پہاڑ چھہ نا باسان زنتہ چھہ خۅدرنگ دُسٕہ پٔٹاہ ؤلِتھ تہ تاپہ دستاراہ گٔنڈِتھ کیاہتام گمبیر کلامہ کرنہِ بیوٹھمت؟‘‘ سۅ ٲس ہردہ تاپہ دۅہہ دِنہ دارِ پٮٹھ بہت پاں سرہ اپور بالہ تھنگٮن پٮٹھ نظرو ستۍ کیاہ تام ساران ہش۔ شدید ذہنی تناوس منز چھہ کردار بیاکھ شخص بنِتھ فریبہ چہ شکلہ منز برونٹھ کُن یوان۔ یہ بیاکھ شخص چھہ سماجی، تمدنی، تہ فکری رشتو نِشہِ مۅکل، مگر موزون پسِ منظر ورٲے چھہ نہ یہ ویژوُن ہیکان بنتھ ۔ لیکھن وول چھہ خارجی منطق ترٲوِتھ موقعہ چہ نزاکٔژ مطابق بالا عقلی فضا تعمیر کران، مگر اغلبک خیال تھٲوِتھ ۔

’’کو‘ٹۍکدلس نِش وٲتِتھ بوزن بییہ سۅے آواز ۔۔۔ پتھ کُن وچھُن۔ رودہ شرانٮن منز اوس بییہِ سُے شُر پاژھۍ زٔٹ لٲگتھ اکِس ویٖرِ ژھایہ رٲسے وچھان تہ بریڈۍ کران۔ تس ٲس تٍرِستۍ نَٹھ۔ بییہِ کوٚرنس آلو۔ وۅلا یورۍ ، مٮہ ستۍ ستۍ کونا چھُکھ پکان۔ کھوژ ما، بہ ہا نِمتھ پانس ستۍ ۔۔۔ ۔ ‘‘ تمس اوس وُنہِ وننے زِ شُر گوٚو بییہِ غیب۔ تس گوٚو خوف۔ أدرِ ہانیمژِ ژمہِ ہندۍ جٔژ وال ؤتھِس کنڈۍ ہوۍ تھوٚد۔ بامبرِ ہوٚت توٚر کانلس تہ و ٚوتھ رکنہِ دار وتہِ۔ ربہِ منز گوس اکھ چپنہ کھۅر بند۔ بیاکھ چپنہِ کھۅر تہِ کوٚڈن، تہ لوٚگ ربہِ منز پھسیومت چپنہِ کھۅر کڈنہِ۔ نمنہ ستۍ گوس چندس منز عینکس کریپھ۔ شرانٮن منز اوس نہ تس فکری تران زِ کتھ کتھ کرِ رٲچھ۔ تٔمۍ تُل کھوژۍ کھوژۍ کلہ تھوٚد۔ دند ٹُوِن ییلہِ شرانٮن منز سُے کُنے شُر بٔٹھِس ہیوٚر داں کھہس اپارِ دنٕوٲرِس پٮٹھ دند ٹکان انہرایہ ودان وُچھ۔ گاش اوس تیوت

کم زِ وۅنۍ اوس نہ شرۍ سند بُتھ ونہِ یوان، بس یہے وۅدنہِ کریہنۍ ژھاے۔

تس گیہِ خوفہ ستۍ کھٕر تہ مسا مسا بچوو آبہ ڈونپھس منز گژھنہ نشہِ ۔ مگر پلو گٔیس ربہِ داوۍ۔ چپنۍ اتھس کٮتھ تُلتھ لوٚگ ٹینڈۍ ؤٹتھ ننہ وورُے وژھہ وژھہ پکنہِ ۔ زنگہ آسس گۅبیمژہ۔ وۅنۍاوس نہ سہ پکان،بلکہ اوس پانس پکناوان۔ ۔۔۔ ( شفیع شوق: اکھ شُر رودہ شرانٮن منز)

یہ تہِ چھہ بنان زِ افسانہ نگار کرِ پیرابل(parable) اختراع یتھ منز کردارن ہند آسُن ویژوُن باسِہ۔ ہری کرشنن لازوال افسانہ ’’پھرِ‘‘ چھہ امچ اکھ مثال ۔ اوٚن، ز ٚور، لوٚنگ، کون، کوٚل، ٹُنڈہ، دولہ، و ٚونگ، کھوسہ، کوٚب تہٕ پھوٚپھ ۔۔کاہ کردار اکِس پتھرِ منز گاڈہ رٔٹتھ امنہ سان دٮن گذاری کران۔ کٲنسہ نہ کٲنسہ ہند عناد، سارنے کانہہ نتہ کانہہ عیب تہ سارنے سفیدپاژھۍ نالۍ۔ مگر تہند یہ سۅکھ گوٚوختم ییلہ اتھ پتھرِ منز کرہُن پوژھ ژھنِتھ کُستام آو تہ دیتنکھ اکھ اکِس نشہِ بیوٚن بیوٚن آسنُک ظن۔

کھوٚشۍ کملاوۍ وُٹھ تہ پھٹجہِ مژرووُن گنڈ۔ کرہُن پوژھ وچھِتھ ژ ٚول پھوٚپھ پتھ۔ د ٚوپن دپس پٲژھِہ کِس رنگس تہ گاڈن کیاہ چھہ پانہ وانۍ واٹھ۔ گاڈن چھہ واٹھ یٔڈ ستۍ۔ یٔڈ ہنزِ بۅچھِہ ستۍ۔ یہ یمن کریہنٮن پاژھٮن تل چھہ تی چھہ مٮہ یتھ سفید پٲژِھس تل۔ کرہُن پوژھ، سفید پوژھ۔ نہ اکھ اکِس نش بیوٚن نہ اکھ اکۍ سندِ کھۅتہ بہتر۔ نہ ہٮکن تہندۍ کرہنۍ پاژھۍ تہند عیب غیب کٔرتھ نہ ہٮکہِ میون سفید پوژھ میانہ زندگی ہند کوس کٲسِتھ۔

مگر ستی پیوس ظن زِ تس چھہِ نہ تگان زہ لفظ تہِ ٹھیٖک پاٹھۍ بولنۍ۔ پننہِ پھپھِہ زیوِ ستۍ کِتھہ پاٹھۍ پھورِ تس یوت زیوٹھ کلامہ۔ تسند پورہ کلامہ بوزنہ برونہہ تراون تم اسہِ پٮٹھ اسُن۔ ( ہری کرشن کول: پھرِ)

پلاٹ کِس ارسطویی تصورس ستۍ آیہ رنگہ رنگہ طریقہ رعایت ننہ۔ترقی پسندی ہندِ دورہ پتہ کٮن افسانن منز چھہ پلاٹ برونٹھے معین مفہومہ باپت افسانہ کٮن سارنے ترکیبی جزن ہند تےُتھ ترتیب تہ تالیف ےُس متحرک ساختس تعمیر کران چھہ۔ بعضے آسِہ یہ اکۍ سے کردارس اندۍ پکھۍ باقی کردارن ہند وۅتھُن بہُن تہ تس ستۍتہند بدلوُن رشتہ۔ مثلاً اخترنس’ پرالب‘ افسانس منز ڈوگرہ دورک رامہ ژندر انگریزسحبن تہ میمن تہند ہون رچھنک وعدہ دِتھ پرٮتھ سٲنکرٲژ دۅہہ داہ ڈبل رٔٹتھ عیش کرنہ چن یادن پھےُردنس منزآور ، تہ تسند نیچو پی این تہ پی اینُن نیچو بنُٹ تس نشہِ مشورہ ژھاران تہ نا امید سپدان۔

پی این دراو دزان دزان۔ پنڈت رامہ ژندر پھیور بنٹس کُن تہ مدرِ ہٹہِ و ٚوننس، ’’ برسا مالیا چلمہِ تموک۔ ( اختر محی الدین: پرالب)

بعضے آسہِ افسانس منز پلاٹ صرف دۅن کردارن ہندٮن مکالمن ہند ترتیب۔ مثلاً اخترن ’یار کیاہ لوِ‘ افسانس منز شاعر یارس تہ تسنزِ سٔژ کرونہِ آشنہِ درمیان کتھ باتھ زِ اختر محی الدین مود تہ ریڈیو کشمیر والیو چھہ تس پٮٹھ پروگرامک سنز کوٚرمت۔

اگر افسانہ نگارن افسانک کلی مدعا تہ مزاج نظرِ تل تھوِتھ متکلم سند نقطہ نظر ورتاونک فیصلہ کوٚر، پلاٹک متبادل ہٮکہِ اکۍ سے جایہ اکۍسے کردارہ سندۍ مکالمہ ٲستھ تکیازِ متکلم راوی ہٮکہِ نہ ہمہ آگاہ آسنہ کہ اعتمادہ باقی کردارن ہند پتِم برونٹھِم عمل تہ تہندٮن ذہنن منز رونما سپدن والٮن کثیر سمت وۅلہرشن زٲنِتھ تہ بیان کٔرِتھ ۔ امین کامل نس ’’ سوال چھہ کلک‘‘ افسانس منز چھہ اکھ زانہہ نہ اندن وول نیاے۔ سورے مسلہ چھہ سگریٹ پھونکان تہ ژکھہِ ستۍ کھمان تھانہ دار افسانہ کس متکلم رٲویس بوزناوان تہ ونان: ’’ یہ بڑا نازک مسلہ ہے۔۔۔۔ بوز کتھ چھٮہ نہ جسمچ۔ یہ دھڑ کی بات نہیں، یہ چھہ کلک معاملہ، مٮہ کیا چھہ تسندس مسلس تہ مازس کرُن۔ مٮہ چھہ مسلہ زِ لاشے کلہ اوس تہ کور کُن اوس۔‘‘

ہیتی تجربہ چھہِ تیلی ضروری تہ روا ییلہِ موضوعی جدّت امچ منگ کران آسِہ، نتہ باسِہ افسانہ کھوٚکھ ہیو، ترشہِ ہرٮن پٮٹھ پھیرن۔ یہ چھہ تمن سارنے افسانن گوٚمت یمن منز ساسہِ پھرِ وننہ آمژہ لولہ دلیلہ یا تنہایی متعلق روایتی کتھہ اساطیری پسِ منظرس منز بے ربط واقعہن ہندِ جونکھرِ مبہم پاٹھۍ وننہ چھٮہ آمژہ۔ علامتیت چھٮہ بجا، مگرعامیانہ واقعہ علامتن الوندۍ تراوُن چھہ نہ کانہہ فن۔ سون دور، یعنی پتمٮن اکوہن ورین ہند دور، چھہ تتھٮن غیر معمولی واقعہن ہند تواتر یا ترانژھ یمو کاشرٮن متعلق قایم کرنہ آمتۍ ساری مقبول مفروضہ اپزۍ ثابت کرۍ تہ ہووُکھ زِ سون وتیرہ تہ رد عمل تہِ چھہ باقی انسانن ہندۍ پاٹھۍبے باور، ادرینٹھۍ تہ نا قابل اندازہ۔ یہ چھہ سہ زمانہ ییلہ گلن بلبلن، شمع تہ پونپرٮن ہنزہ کتھہ چارۍ پاٹھ بنیوٚو تہ افسانہ نگار گوٚو حقیقی زندگی ہندٮن وردار مسلن، تہ تلخ پزرن ستۍ دو بدو۔ ازیک حساس انسان چھہ لول تہ دٕے، اقرار تہ احتجاج ، معصومیت تہ تجربہ، تہ زونس تہ مرنس درمیان پیچیدہ تہ بدلونٮن دوگونہ رشتن ہندس جدلیاتس منز ہینہ آمت؛ افسانہ نگارس چھہ یی زانُن، ژینُن تہ پیش کرُن۔ یہ موضوعی تبدیلی چھٮہ ازۍکس ترجمان افسانس منز مناسب تہ نوِ کھۅتہ نوۍ ہیتی تجربہ چھہِ ضروری ۔ اکہ افسانچ ہیت ہیکہِ نہ بییہِ افسانچ ہیت بٔنتھ۔ مثلاً موتک موضوع چھہ ’’ ژھٮن‘‘ افسانس منز روشن لال کردارہ سند سہ وٲراگ ےُس جوٚمہ کٮن مایگرنٹ کیمپن ہند لٔگۍ لون چھہ۔ تمام رشتہ ژھٮننہ پتہ ماجہِ ہند مرُن چھہ مکمل ژھٮن ۔

روشن لال اوس ٹینٹس نیبرہ کنہِ کھڑا ژۅواپارۍنظرہ تراوان تہ کیاہ تانۍ پرزناونچ کوشش کران زن تہ اچھن ژھانپھ بہتھ ٲسس ےۅسہ مۅکلاوان اوس۔ بُتھس پٮٹھ اوسس بدلے تیز ہیو۔ اکۍ نفرن کر ہمت تہ چھس بڈِ بڈِ ونان۔۔۔

روشن لال سہ کتہِ کاکھ؟ ژہ کمہ کتھہ چھکھ کران؟ کاکس گیہِ وُہ وری سۅرگہ واس گٲمتس، از مۅیی مٲج۔ بوزتھہ مٲج مۅیی۔ أرنۍ مۅیی۔ مالۍ اوسے صرف شہل گام وچھمت۔ ماجہ وُچھے گامک شیہجار تہِ تہ جوٚمیک نارہ صحراو تہِ۔ ژہ گوکھ از دۅشونۍ نشہِ آزاد۔ ژٮہ گوٚے ژھٮن مکمل۔۔۔‘‘ ( رتن لال شانت: ژھٮن

یوٚہے موت چھہ شفیع شوق نس ’’گدۍ‘‘ افسانس منزتشدد پرور سُلہ بٹ نہِ پانہ ہلاک سپدنہ برۅنہہ بے مٲل شہوتس منز پناہ نےُن بنان :

ڈوکس منز آسہ مٲنشہِ درامن کران۔ مٲنشہِ روزہ راتۍ راتس درامن کران تہ منزۍ منزۍ تھکھ کٔڈتھ زیٹھۍ وۅش ہوۍ تراوان۔ڈوکس منز ٲسۍ گگر راتۍ راتس دورہ دور کران۔تمن اوس یوٚہے کیہتام شادۍیانہ ہیو۔ لۅتہ وٲے لۅتہ وٲے آوازن ہند یہ سلسلہ رود جاری۔ یوٚتام سُلہ بٹنس پانژاہ وُہرِس جسمس بییہِ کینہہ سکتھے روز نہ۔ پتہ نِیس مژِ نیندرِ سٲرے دگ ژہتھ۔

گاسہ گیجہِ تلہ گۅژر کٔڈتھ تٔر وزیرا برٲر ہش شُرٮن نِش واپس۔